وزیراعظم آج آزاد کشمیر کے زلزلے سے متاثرہ علاقوں کا دورہ کریں گے

0
1074

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان آج (30 ستمبر کو) کو زلزلہ متاثرین سے اظہارِ یکجہتی کے لیے آزاد جموں و کشمیر کے ضلع میرپور کے جنوبی علاقے کا دورہ کریں گے۔

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق حکام نے بتایا کہ وزیراعظم عمران خان کل ( بروز منگل) میر پور اور اس سے ملحقہ علاقوں کا دورہ کریں گے۔

میرپور کے ڈویژنل کمشنر چوہدری محمد طیب نے بتایا کہ وزیراعظم کو ہیلی پیڈ پر آزاد کشمیر کے حکام کی جانب سے امدادی، ریلیف اور بحال کے اقدامات سے متعلق بریفنگ دی جائے گی جس کے بعد وہ زلزلے کے نتیجے میں زخمی ہونے والے افراد کی عیادت کے لیے ڈویژنل ہیڈکوارٹرز ہسپتال کا دورہ کریں گے۔

مزید پڑھیں: زلزلہ متاثرین کے لواحقین کیلئے فی کس 5 لاکھ روپے امداد کا اعلان

چوہدری محمد طیب کے مطابق ضلع میرپور میں زلزلے کے نتیجے میں ہلاکتوں کی تعداد سے 40 تک پہنچ گئی جبکہ صوبہ پنجاب کے ضلع جہلم میں 2 افراد جاں بحق ہوئے۔

انہوں نے کہا کہ ضلع میرپور میں 172 افراد شدید زخمی ہوئے جبکہ 680 افراد زلزلے کے نتیجے میں معمولی زخم آئے۔

ڈویژنل کمشنر نے کہا کہ شدید زخمی افراد میں سے 27 تاحال ڈویژنل ہیڈکوارٹرز ہسپتال اور 3 کمبائنڈ ملٹری ہسپتال میں زیرِ علاج ہیں۔

خیال رہے کہ 28 ستمبر کو وزیراعظم عمران خان نے آزاد کشمیر اور پنجاب میں زلزلے کے نتیجے میں جاں بحق افراد کے خاندان کو فی کس 5 لاکھ روہے معاوضہ دینے کا اعلان کیا تھا۔

چوہدری محمد طیب نے کہا کہ زلزلے میں جاں بحق افراد کے لواحقین کے درمیان امدادی رقم کے چیک آج وزیراعظم آزاد کشمیر راجا فاروق حیدر کی جانب سے تقسیم کیے جانے کا امکان ہے جو وزیراعظم عمران خان کے استقبال کے لیے میرپور میں موجود ہیں۔

تاہم وفاقی یا آزاد کشمیر کی حکومت کی جانب سے اب تک زلزلے میں زخمی ہونے والے یا املاک کا نقصان اٹھانے والے افراد کو معاوضہ دینے سے متعلق کوئی اعلان سامنے نہیں آیا۔

آزاد جموں و کشمیر کے قدرتی آفات اور پریشان حال افراد سے متعلق ایکٹ ، 2011 کے تحت جاں بحق ہونے والے ہر افراد کے لواحقین کو ڈیڑھ لاکھ روپے اور ہر زخمی کو 50 ہزار روپے معاوضہ دیا جائے گا جبکہ تباہ شدہ کنکریٹ کے گھر کا معاوضہ ایک لاکھ روپے اور کچے گھر کا 60 ہزار روپے ہے۔

گزشتہ روز چیئرمین نیشنل ڈزاسٹر مینیجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) لیفٹنٹ جنرل محمد افضل چوہدری نے ڈویژنل کمشنر کے دفتر میں زلزلے سے متاثرہ علاقوں کے دورے کے بعد امدادی اور بحالی کی سرگرمیوں سے متعلق اجلاس کی صدارت کی۔

انہوں نے کہا تھا کہ این ڈی ای اے زلزلہ متاثرین کی بحالی کے لیے دستیاب تمام وسائل بروئے کار لائے گی۔

یہ بھی پڑھیں: آزاد کشمیر، پنجاب، خیبرپختونخوا میں شدید زلزلہ، 25 افراد جاں بحق، 400 زخمی

چیئرمین این ڈی ایم اے نے اجلاس میں کہا کہ ’ میں اس علاقے سے واقف ہوں اور ہم زلزلہ متاثرین کو معمول کی زندگی پر واپس لانے می کوئی کسر نہیں چھوڑیں گے‘۔

علیحدہ میڈیا بریفنگ میں ڈویژنل کمشنر چوہدری محمد طیب نے کہا کہ زلزلے سے متاثرہ علاقوں کو امدادی ضروریات کے اندازے کے لیے 6 زونز اور انفراسٹرکچر کو پہنچنے والے نقصان کے سروے لیے 7 زونز میں تقسیم کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ املاک کو پہنچنے والے نقصانات کے سروے کے لیے 107 افسران پر مشتمل 22 ٹیمیں کام کررہی ہیں جو آئندہ 10 روز میں یہ کام مکمل کرلیں گیں۔

ڈویژنل کمشنر نے کہا کہ آزاد جموں کشمیر ٹیکنالوجی بورڈ انفراسٹرکچر کو پہنچنے والے نقصانات جاننے کے لیے ایپلیکیشن بھی بنائی ہے۔

خیال رہے کہ 24 ستمبر کو آزاد کشمیر سمیت پنجاب اور خبیرپختونخوا کے مختلف شہروں میں شدید زلزلے کے نتیجے میں ابتدائی طور پر 25 افراد جاں بحق اور تقریباً 400 افراد زخمی ہوئے تھے۔

سہ پہر 4 بجے آنے والے زلزلے کی شدت 5.8 اور گہرائی 10 کلومیٹر تھی، اور اس کا مرکز جہلم کے شمال میں آزاد کشمیر اور پنجاب کو جدا کرنے والی سرحد سے 22 اعشاریہ 3 کلومیٹر دور تھا۔

چیف میٹرولوجسٹ محمد ریاض نے اے ایف پی کو بتایا تھا کہ زلزلے سے پنجاب اور خیبرپختونخوا کے چند علاقے متاثر ہوئے تھے جبکہ سب سے زیادہ نقصان میرپور آزاد کشمیر میں ہوا تھا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here