ایف بی آر پر بلوچستان میں تجارت روکنے کی کوشش کا الزام

0
604

کوئٹہ ایوانِ صنعت وتجارت (کیو سی سی آئی) نے صوبائی دارالحکومت میں وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف بی آر) کے چیف کلیکٹر پر بلوچستان میں قانونی تجارت کو روکنے کی کوشش کا الزام عائد کیا ہے۔

کوئٹہ پریس کلب میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیو سی سی آئی کے سینئر نائب صدر بدرالدین کاکڑ کسٹم کلیئرنس کے باوجود ٹرکوں کو سرحد پر روکنے کی وجہ سے وفاقی حکومت اور ایف بی آر پر برس پڑے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’قانونی تجارت کی حوصلہ افزائی کرنے کے بجائے یہ لوگ جان بوجھ کر اسمگلنگ کو فروغ دے رہے ہیں‘۔

یہ بھی پڑھیں: ’پاک ایران سرحد پر غیرقانونی تجارت ختم کرنے کیلئے بینکنگ

بدرالدین کاکڑ کا مزید کہنا تھا کہ کوئٹہ کا ایوانِ صنعت و تجارت قانونی تجارت کو فروغ دینے کے لیے حکومت کی معاونت کرتا ہے لیکن اسمگلنگ میں اضافہ ہورہا ہے۔

انہوں نے حکام کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ اگر یہ سلسلہ یونہی جاری و ساری رہا تو وہ ہڑتال کریں گے۔

کیو سی سی آئی کے سینئر نائب کا یہ بھی کہنا تھا کہ ’ایران اور افغانستان کی سرحد پر تجارت کرنا بہت مشکل کام ہے لیکن ہم یہ کرتے ہیں اس کے باوجود نہ تو کبھی چیف کلیکٹر نے ہم سے ملاقات کی نہ ہمارے مسائل میں دلچسپی لی۔

مزید پڑھیں: ’گوادر، چاہ بہار بندرگاہوں سے ایران کے ساتھ تجارت کو فروغ ملے گا‘

انہوں نے اس بات پر مایوسی کا اظہار کیا کہ ایف بی آر کلیکٹوریٹ اسلام آباد کے احکامات پر ’ہمارا مال ہر دوسرے روز روک دیا جاتا ہے‘۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ’تاجروں کے ساتھ ساتھ ہم دیگر اسٹیک ہولڈرز کو بھی مدعو کرتے ہیں کہ ہماری جدو جہد میں شامل ہوں‘۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here